خواتین کی صحت

حاملہ خواتین میں ڈپریشن ہونے پر یہ 5 علامات نظر آتی ہیں، جانیں اس کا بچے پر کیا اثر ہوتا ہے۔

آج کل ہر دوسرا شخص کسی نہ کسی وجہ سے ڈپریشن یا ڈپریشن کا شکار ہے۔ ڈپریشن ایک ذہنی بیماری ہے جو ہفتوں، مہینوں یا سالوں تک چل سکتی ہے۔ کچھ لوگ بغیر دوا کے ڈپریشن سے صحت یاب ہو جاتے ہیں جبکہ کچھ لوگوں کو اس کا مکمل علاج کروانا پڑتا ہے۔ ڈپریشن ذہنی کے ساتھ ساتھ جسمانی طور پر بھی متاثر ہوتا ہے۔ یہ مریض کی پوری روٹین کو متاثر کرتا ہے۔ یہ حالت حمل یا حمل میں بھی دیکھی جاتی ہے۔ حاملہ خواتین میں(depression in pregnancy) ڈپریشن بغیر کسی وجہ یا وجہ کے ہو سکتا ہے۔ اس میں عورتیں اداس، مایوس، پریشان ہوجاتی ہیں۔ خواتین میں ڈپریشن کی بہت سی علامات ہوتی ہیں۔ یہ شامل ہیں-

depression symptoms in pregnant women in urdu

حمل میں ڈپریشن کی علامات. (depression symptoms in pregnancy)

حمل کے دوران ڈپریشن کی علامات عام آدمی سے قدرے مختلف ہو سکتی ہیں۔ حمل میں ڈپریشن خواتین کے مستقبل کو بھی متاثر کر سکتا ہے۔ یہی نہیں بلکہ اس کا اثر بچے پر بھی پڑتا ہے۔ حمل کے دوران خواتین میں ایسی کئی علامات ظاہر ہوتی ہیں، جو ڈپریشن یا ڈپریشن کی نشاندہی کرتی ہیں۔ حمل میں ڈپریشن کی علامات یہ ہیں-

1. افسردہ ہونا. (depressed)

حمل کے دوران ذہنی دباؤ یا ڈپریشن ہونے پر خواتین ذہنی تناؤ کا شکار رہتی ہیں۔ وہ ہمیشہ اکیلے رہنا پسند کرتی ہے اور کسی چیز سے لطف اندوز نہیں ہوتی۔ اس صورت حال میں خواتین اداس، اداس اور پرسکون رہتی ہیں۔ اس علامت سے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ حاملہ عورت ڈپریشن میں ہے۔ اگر کوئی حاملہ عورت آپ کے گھر میں اکیلی رہتی ہے یا افسردہ ہے تو اس کی مدد کریں اور اس سے بات کرنے کی کوشش کریں۔

یہ بھی پڑھیں-  حمل کے دوران امرود کھانے کے فوائد اور نقصانات ، غذا کے ماہرین سے جانیں۔

2. بہت کم یا بہت زیادہ کھانا. (Eating too little or too much food)

حمل کے دوران خواتین مختلف قسم کی غذائیں کھانا پسند کرتی ہیں۔ لیکن جو خواتین حمل کے دوران ڈپریشن میں رہتی ہیں، وہ یا تو بہت زیادہ کھانا کھاتی ہیں یا بہت کم کھاتی ہیں۔ یہ بھی معلوم کیا جا سکتا ہے کہ حاملہ عورت ڈپریشن میں ہے۔ اس حالت میں وہ معمول سے زیادہ یا کم کھانا کھاتے ہیں۔

3. تھکاوٹ اور کمزوری محسوس کرنا.(feeling tired and weak)

اگرچہ حمل کے دوران خواتین کا تھکاوٹ اور کمزوری محسوس کرنا معمول کی بات ہے لیکن یہ ڈپریشن کی علامت بھی ہو سکتی ہے۔ حمل میں ڈپریشن کی وجہ سے خواتین بہت تھکاوٹ اور کمزوری محسوس کرتی ہیں۔ تھوڑا سا کام کرنے کے بعد بھی وہ بہت تھک جاتے ہیں، کمزوری محسوس کرتے ہیں۔

4. نیند کی کمی یا بے خوابی۔(Sleeping morel or insomnia)

حاملہ خواتین میں بہت زیادہ سونا یا بے خوابی ہونا ان میں ڈپریشن کی علامت ہے۔ کوئی بھی شخص 9-10 گھنٹے کی نیند لے سکتا ہے، اس سے زیادہ سونا معمول کی بات نہیں ہے۔ یہ حالت حمل میں ڈپریشن کا باعث بن سکتی ہے۔ اسی طرح اگر آپ کو حمل کے دوران سونے میں دشواری ہو رہی ہے یعنی بے خوابی تو یہ بھی ڈپریشن کی علامت ہو سکتی ہے۔

depression symptoms in pregnant women in urdu

5. بلا وجہ رونا.(Crying without reason)

حمل میں بلا وجہ رونا بھی ڈپریشن کی علامت ہے۔ کئی بار عورتیں اپنے دماغ میں اداس اور مایوس ہوتی ہیں اور وہ رونے لگتی ہیں۔ یہ افسردگی کی حالت میں ہوسکتا ہے۔ خواتین روتی ہیں لیکن اس کی وجہ بتانے سے قاصر رہتی ہیں تو اس کا مطلب ہے کہ وہ ڈپریشن میں ہے۔

حمل میں ڈپریشن کی وجوہات.(causes of depression in pregnancy)

  • وہ خواتین جو پہلے ڈپریشن یا بائی پولر ڈس آرڈر کی مریض رہی ہیں۔
  • وہ خواتین جو پچھلے حمل میں بھی ڈپریشن کا شکار رہی ہیں۔
  • خاندانی ذہنی خرابی کی تاریخ.
  • سماجی حمایت کی کمی.
  • تمباکو نوشی یا زیادہ شراب نوشی.

یہ بھی پڑھیں-  بچہ دانی کو صحت مند رکھنے کے لیے خواتین کو یہ 5 طریقے اپنانے چاہئیں

حمل میں ڈپریشن کے اثرات.(effects of depression in pregnancy)

ڈپریشن حمل کو بھی متاثر کرتا ہے۔ ڈپریشن حمل کو کئی طریقوں سے متاثر کر سکتا ہے۔ حمل میں ڈپریشن اسقاط حمل کا باعث بن سکتا ہے۔ اس کے علاوہ یہ نفلی ڈپریشن کا سبب بھی بن سکتا ہے۔ بچے کی پیدائش کے بعد بھی خواتین میں ڈپریشن برقرار رہ سکتا ہے۔ یہ خواتین کو کئی طریقوں سے متاثر کرتا ہے، جیسے کہ بچے کی دیکھ بھال نہ کر پانا، ضرورت سے زیادہ فکر، تناؤ، فیصلہ کرنے میں دشواری، ہمیشہ اداس اور نا امید محسوس کرنا۔ یہی نہیں حمل میں ڈپریشن کی وجہ سے خواتین مستقبل میں خود پر قابو نہیں رکھ پاتی ہیں۔

بچے پر ڈپریشن کا نقصان.

ڈپریشن کے بچے پر اثرات- حمل میں ڈپریشن یا ڈپریشن بچے کو بھی کئی طرح سے متاثر کر سکتا ہے۔ حمل کے دوران خواتین میں ذہنی دباؤ قبل از وقت پیدائش کا باعث بن سکتا ہے۔ اس کے علاوہ ڈپریشن کی وجہ سے بچہ کم وزن کے ساتھ پیدا ہو سکتا ہے۔ یہی نہیں، حمل میں ڈپریشن کا بروقت علاج نہ کیا جائے تو یہ بچے کو متاثر کر سکتی ہے۔ یہ صورتحال ماں اور بچے کے درمیان جذباتی بندھن کو بھی متاثر کرتی ہے۔ ماں کا یہ ڈپریشن بچے کو طویل عرصے تک متاثر کر سکتا ہے۔ اس سے بچے کی ذہنی صحت اور جسمانی صحت دونوں پر اثر پڑ سکتا ہے۔

یہی نہیں اس صورتحال میں بچہ اپنی ماں کے ساتھ کھل کر بات کرنے میں بھی جھجک محسوس کرتا ہے۔ اسے اپنی ماں کے آس پاس رہنا مشکل لگتا ہے۔ وہ دوسرے بچوں کے مقابلے ذہنی طور پر کم صحت مند ہوتے ہیں۔ اس کے علاوہ وہ مستقبل میں ڈپریشن یا ڈپریشن کا بھی شکار ہو سکتے ہیں۔

اگر آپ حاملہ ہیں اور ڈپریشن میں ہیں.تو آپ کو اس کی علامات کو بالکل نظر انداز نہیں کرنا چاہیے۔ کیونکہ یہ مستقبل میں آپ اور بچے دونوں کو نقصان پہنچا سکتا ہے۔ اس لیے اس کی علامات کو دیکھتے ہی فوراً ڈاکٹر سے رجوع کریں اور ضروری مشورہ لیں۔ اس کے علاوہ گھر والوں کو بھی چاہیے کہ وہ حمل میں خواتین کا بھرپور ساتھ دیں اور ہر حال میں ان کے ساتھ رہیں۔ اس سے وہ اپنے تمام مسائل، خوشی اور غم آپ کے ساتھ شیئر کر سکتے ہیں. اور ڈپریشن جیسی ذہنی بیماری سے خود کو بچا سکتے ہیں۔ ڈپریشن حاملہ خواتین کے ساتھ ساتھ ان کے بچوں کو بھی متاثر کر سکتا ہے. اس لیے زیادہ توجہ کی ضرورت ہے۔

Aarif Rao

Arif Rao is a Herbalist, Blogger, Writer, YouTuber, and Digital Content Creator who is helping people by solving their problems and making them physically stable.

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button